زندگی یونہی گزر جاتی تو

زندگی یونہی گزر جاتی تو
کتنا عجب سا ہوتا
تیری زلفوں کے سائے میں مسافر کیسے شام کرتا
وفا کے پیرائے میں کیسے نام درج کرتا

 


محبت کی اداؤں بنا یہ شام کتنی اداس ہوتی
کیسے دن ہوتا کیسے رات ہوتی اگر زندگی یونہی گزر جاتی تو
چاند کے بنا رات بین کرتی
تارے ٹم ٹم کرتے ممتا کو کھوجتے رہ جاتے
باغباں کے بغیر گل کتنے انا پرست ہوتے
بنا خوشبؤ پھول فقط اک پیرہن ہوتا
یہ زندگی یونہی گزر جاتی تو کیا ہوتا
اک شمع کی مانند جلتی جاتی
اور پروانے نہ ہوتے تو کون نثار ہوتا
دل ہوتا دیوانے نہ ہوتے تو دیوانگی کا کیا عالم ہوتا
یہ زندگی یونہی گزر جاتی تو سب کتنا خالی کتنا ادھورا ہوتا
صد شکر کہ یہ زندگی یونہی نہیں گزری
اس میں منزل کو جاتی راہ ملی
اور اس پر اک پیارا سا ہم قدم ملا
اور یہ زندگی۔۔ زندگی بن گئی

کائنات بشیر
********

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s