زندگی یونہی گزر جاتی

زندگی یونہی گزر جاتی

نہ ستاتی، نہ رلاتی، نہ تڑپاتی، نہ جلاتی
زندگی یونہی گزر جاتی تو کتنا اچھا تھا

فراق کے لبادے اڑاتی
نہ جدائیوں کے رستے دکھاتی
تمنائیں سر نہ اٹھاتیں
جذبات ہلچل نہ مچاتے
یونہی ندی شور مچاتی
کوئل کوکتی تو کتنا اچھا تھا

نہ وقت کا ضیاع ہوتا
نہ کچھ کھونے کا گماں ہوتا
یہ زمانہ اور سماج ہوتا
نہ رسمیں ہوتیں نہ رواج ہوتا
پھول بگیا میں کھلتے
بھنورے گنگناتے تو کتنا اچھا تھا

یہ زندگی اپنے ہی نام ہوتی
من بھی اپنا پاسدار ہوتا
وفا کی چاہت ہوتی
نہ بےوفائی کا ڈر ہوتا
یونہی پرندے شور کرتے
اڑان بھرتےتو کتنا اچھا تھا

زندگی یونہی گزر جاتی تو کتنا اچھا تھا
یہ دل، دل ہی رہتا تو کتنا اچھا تھا

کائنات بشیر
********

Advertisements

2 comments on “زندگی یونہی گزر جاتی

  1. السلام علیکم..!!! بخدا آپ کی تحریرون میں نحل پرستان کی چاشنی اور کلیوں جیسی شگفتگی ہے…!!!!

    Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s